impct social media on youth

نوجوان نسل پر سوشل میڈیا کہ اثرات۔

سوشل میڈیا جدید زمانے کی سب سے بڑی ایجاد میں سے ایک ہے۔ سوشل میڈیا کی ایجاد نے دنیا میں خبر اور اُس کا زوایہ بدل کر رکھ دیا ہے ۔ سوشل میڈیا کہ اثرات پر بات کرنے سے پہلے ضرروی ہے کہ اس کی ایجاد

انگریزی میں نوکریوں کے بارے میں معلومات یہاں کلک کریں

کہ حوالے سے سمجھ لیا جائے کہ کیسے اس نے انسانی زندگی پر مثبت اور منفی اثرات مرتب کیئے ہیں ۔

انٹرنیٹ کو اس صدی کی سب سے بڑی ایجاد میں سے ایک سمجھا جاتا ہے ساتھ ہی جدید ٹیکنالوجی میں آئے روز موثر تبدیلی آنا ایک خوش آئند بات ہے ۔ اسی ایجاد کی وجہ سے آج انسانی زندگی میں بہت سے کام آسان ہوگئے ہیں اور انسانی زندگی پُر سکون اور پُر آسائش ہوگئ ہے ۔ جہاں تک بات کی جائے سوشل میڈیا کہ حوالے سے تو اس کی ایجاد نے دنیا میں ایک بڑی تبدیلی پید اکی ہے ۔

اس کی ایجاد نے جہاں لوگوں کہ درمیان شعور پیدا کیا ہے وہی اس کی ایجاد نے کہیں خطرناک خطرات لاحق کر دیئے ہیں ۔ ایک اندازے کہ مطابق عالمی اداروں کو دنیا میں سب سے زیادہ خطرات سوشل میڈیا پر جھوٹی خبروں سے ہیں

ایک طرف دنیا میں سوشل میڈیا کی وجہ سے کافی مثبت رویہ بھی سامنے آیا ہے تو دوسری طرف سوشل میڈیا ہی عدم برداشت اور فرقہ واریت بڑھانے کی وجہ ثابت ہوا ہے ۔ اگر یہ کہا جائے کہ پچھلی ایک دہائی میں سوشل میڈیا نے لوگوں کی زندگی کو بہتر بھی بنایا ہے اور بُری طرح متاثر بھی کیا ہے ۔تو غلط نہ ہو گا ۔ اگر موجودہ صورتحال کو مد نظر رکھا جا ئے تو سوشل میڈیا کی وجہ سے پاکستان میں کافی فسادات واقعہ ہوئے ہیں ۔

زیادہ دُور نہیں جاتے ہیں ، نوجوانوں پر سوشل میڈیا کہ اثرات کو جانے کہ لیئے گذشتہ دنوں کہ واقعہ پر غور کر لیتے ہیں جب لاہور میں ایک پندرہ سالہ نوجوان نے ایک بلی کہ ساتھ زیادتی کی جس کی ویڈیو سے ہمیں باخوبی اندازہ ہوتا ہے کہ پاکستان میں سوشل میڈیا کی وجہ سے کافی مشکلات پیدا ہوئی ہیں اور نوجوان نسل پر کافی منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں ۔

جہاں نوجوان نسل پر منفی اثرات مرتب ہوئے ہیں ، وہی پر ایسے طالب علم بھی ہیں جنہوں نے سوشل میڈیا کہ استعمال کو مثبت بنایا اور نہ صرف شخصی علم میں اضافہ کیا بلکہ ملکی ترقی میں بھی اپنا ایک قلیدی کردار ادا کیا ۔آج پاکستان میں ایک کثیر تعداد اُن لوگوں کی ہے جو سوشل میڈیا کی وجہ سے تعلیم ، شہرت ، اور پیسہ کما رہے ہیں اور اپنا اور اپنے اہل خانہ کی زندگی بہتر کرنے کی کوشش کر رہے ہیں ۔

آج کل نوجوان نسل سوشل میڈیا کہ مختلف پلیٹ فارم پر مہارت حاصل کر کے اپنے آپکو جدید ٹیکنالوجی سے متعارف کروا رہیں ہیں جو ایک باصلاحیت قوم کی طرف بڑھنے کا ایک قلیدی قدم ہے ۔ آج کہ اس جدید دور میں سوشل میڈیا کا استعمال ہر انسان کی پونچھ تک ہو چکا ہے ، اب ہر فرد کی تعلیم ، تربیت اور اُس کہ علاقائی رویہ تک بات رہ جاتی ہے کہ آیا وہ فرد سوشل میڈیا کا استعمال کیسے کرتا ہے ۔

موجودہ حالت کو مد نظر رکھا جائے تو اس بات کا باخوبی اندازہ کیا جاسکتا ہے کہ پاکستان میں لوگوں کو سوشل میڈیا کہ استعمال کی تربیت نہیں دی گئ ہے۔ اس بات میں تو کوئی شک نہیں کہ دنیا میں ہر نئ چیز کی ایجاد کہ ساتھ اُس کو استعمال کرنے کہ حوالے سے رہنمائی دی جاتی ہے تاکہ وہ مخصوص ایجاد عالم انسانیت کہ لیئے وبال جان نہ بن سکے ، عالمی دنیا میں آج بھی ہر شخص کو سوشل میڈیا کو اسعمال کر نے کہ حوالے سے باقدہ ٹرینگ دی جاتی ہے لیکن پاکستان میں اس بات کا فقدان نظر آتا ہے ۔

یہاں پر طالب علموں کو سوشل میڈیا کہ استعمال کہ حوالے سے آگاہ نہیں کیا جاتا ، باقی عام عوام تک تو اس کی آگاہی دور کی بات ہے ۔

اب ہمیں سوچنا یہ ہے کہ سوشل میڈیا کو عوام دوست کیسے بنایا جائے کیونکہ بہت سے افراد اور طالب علموں کو اس بات سے آشنائی نہیں ہوگی کہ پاکستان میں سوشل میڈیا پر کافی زیادہ پابندیاں ہیں ۔ چونکہ پاکستان کا شمار دنیا کہ تیسرے درجہ کہ ممالک میں ہوتا ہے ، اس لیئے پاکستان میں سوشل میڈیا پر کافی زیادہ پابندیاں ہیں ۔ ان پابندیوں کی وجہ یہ بھی ہیں کہ پاکستان میں لوگ سوشل میڈیا پر نسلی تعصب اور فرقہ وارانا مواد شیئر کرتے ہیں جو مختلف سوشل میڈیا سایٹ کہ قوانین کہ خلاف ہیں ۔

پاکستان کا شمار دنیا کہ اُن ممالک میں سے ہوتا ہے جو سوشل میڈیا پر اس قسم کا مواد ڈالتے ہیں جو قوانین کہ خلاف ہوتا ہے ۔ اسی بات کو صیح سمت میں لے کر جانا ہے اور سوچنا یہ ہے کہ کیسے لوگوں کی فکر میں تبدیلی لائی جائے اور کیسے لوگ سوشل میڈیا کہ استعمال مو متاثر کن بنا سکے۔

اس عمل کا باقدہ آغاز نوجوان نسل سے ہی ہوسکتا ہے ، ہر ریاست کی یہ ذمہ داری ہوتی ہے کہ وہ اپنی عوام کو بہتر مستقبل فراہم کرے ۔ اسی بات کو مدنظر رکھتے ہوئے پاکستانی حکومت کو چاہیے کہ نوجوان نسل کی کردار سازی کہ لیے خصوصی انتظامات کرے اور نوجون نسل کو سوشل میڈیا کہ حوالے سے خصوصی رہنمائی دے تاکہ ملک کا مستقبل صحیح سمت کی جانب گامزن ہو سکے۔

ساتھ ہی اس بات کو بھی مدنظر رکھنا ہوگا کہ سوشل میڈیا پر پھلینے والی خبروں کی ہر انسان تک رسائی کافی آسان ہوگئ ہے ۔ اس لیے ہر فرد کو سوشل میڈیا کو استعمال کرنے کی باقدہ رہنمائی کافی ضروری عمل ہے ۔ اسی عمل سے ہم اپنی قوم کو ترقی کی راہ پر گامزن کر سکیں گے اور ہماری نوجوان نسل پر مثبت اثرات مرتب ہونگے اور ساتھ ہی نوجوان نسل اس کہ استعمال سے اپنے لیے بہتر مواقع تلاش کر سکیں گے۔

One thought on “نوجوان نسل پر سوشل میڈیا کہ اثرات”

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You have successfully subscribed to the newsletter

There was an error while trying to send your request. Please try again.

We will notified you when new / latest job is published on our website? Enter your email address to be the first to know.