پاکستان میں نوکریاں

پاکستان میں نوکریاں 

پاکستان دنیا کے اُن چند ممالک میں سے ہے جہاں لوگوں کا روزگار نوکریوں کہ ساتھ منسلک ہے۔ ملک کی اکثریت آبادی کی کوشش بہتر نوکری کی تلاش ہے۔ ملک کی آبادی کا ساٹھ سے ستر فیصد تناسب نوجوانوں پر مشتمل ہے جن کی کوشش بہتر نوکری کی تلاش ہے۔ اگر ہم پاکستان میں نوکریوں کی بات کریں تو موجودہ صورتحال میں کاورنا کے باعث پاکستان میں بہت سے لوگ بے روزگار ہو ئے ہیں۔

ایک اندازے کے مطابق پوری دنیا میں قریبا کروڑ سے زیادہ لوگ اپنی نوکری سے نکالے گئے ہیں ، جبکہ بہت سے نوکری پیشہ لوگوں کی تنخواہوں میں کٹوتی کی گئ ہے

انگریزی میں نوکریوں کے بارے میں معلومات یہاں کلک کریں

۔ ایک اندازے کے مطابق پاکستان میں قریبا تیس لاکھ لوگ کارونا کی وجہ سے نکالے گئے ہیں۔ کارونا وائرس کی وجہ سے پاکستان کا نوکری پیشہ طبقہ سب سے زیادہ متاثر ہو اہے، ایک معروف لکھاری کی جانب سے لکھا گیا ہے کہ تیس لاکھ لوگوں کی نوکری جانے کا مطلب ، تیس لاکھ خاندانوں کا بے روزگار ہونا ہے

۔ موجودہ صورتحال میں پاکستانی معیشت کہ حالت انتہائی پیچیدہ ہیں لیکن اس کہ برعکس یہ اندازہ لگایا جا رہا ہے کہ عید الااضحی کہ بعد پاکستانی کاروبار ایک مرتبہ پھر کھڑے ہونگے اور لوگ روزگار کی تلاش میں باہر آئیں گے۔

پاکستان میں مکینیکل انجینئرکی فیلڈ میں نوکریاں حاصل کرنا ایک مشکل عمل ہے کیونکہ یہ ایک ایسا طبقہ ہے جہاں اکثر و بیشتر لوگ نوکری کی تلاش کرتے ہیں ۔ یہی بنیادی وجہ ہے کہ اس فیلڈ میں نوکری حاصل کرنا بہت مشکل ہو گیا ہے۔

موجودہ صورتحال کہ پیشہ نظر پاکستان میں لوگ ڈرائیور کی نوکریاں ڈھونڈ رہے ہیں اور یہی وجہ ہے کہ آج ہمیں پڑھے لکھے ، ڈگری یافتہ لوگ ڈرائیور کی نوکری کرتے ہوئے دکھائی دے رہے ہیں ۔ آگر جدید زمانے کے تقاضوں کو مدنظر رکھا جائے تو موجودہ صورتحال میں اپنی صلاحیتوں کو بڑھایا جائے تاکہ مستقبل میں کسی بھی نوکری کہ لیئے آپ بہترین اُمید وار ثابت ہو سکیں اور یہی کامیابی کی اصل وجہ بن سکتی ہے۔

پاکستان میں ایک بڑی تعداد اُن لوگوں پر بھی مشتمل ہے جو روز مرہ کی بنیا د پر پروجیکٹ لے کر کرتے ہیں ، ایسے لوگوں کو عموما فری لانسر کہا جاتا ہے ۔ پاکستانی حکومت کا ایک احسان اقدام بھی سامنے آیا تھا۔ پنجاب حکومت نے ڈی جی اسکل کے نام سے آن لائن کورس متعارف کروایا تھا جہاں بے روزگار لوگوں اور نوجوانوں کو فری لانس کورس بالکل مفت کروایا جاتا تھا۔ اس کا مقصد لوگوں کے ہا تھ میں مہارت دینا تھا، تاکہ لوگ اپنے آپ کو اور اپنے گھر کو منظم انداز میں سپورٹ کر سکیں ۔

پاکستان میں ڈیلی جابز کے حوالے سے لوگ بہت کچھ تلاش کرتے ہیں لیکن صرف وہی لوگ اس کام سے منافع کما سکتے ہیں جو اس کام کو بہتر انداز سے سمجھ سکتے ہیں ۔ کارونا وائرس کی وبا نے جب پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا تھا ، تو اس دوران صرف وہی لوگ کما پا رہے تھی جو آن لائن جابز سے معتارف تھے۔

اگر پاکستان میں جابز کا مستقبل دیکھا جائے تو وہی لوگ کامیاب ہو سکتے ہیں جو انٹرنیٹ کو سمجھ کر جدید زمانے کے تقاضوں کو استعمال کرکے آن لائن جاب لینے کی اہلایت رکھتے ہوں گے ۔

پاکستان جیسے ملک میں جہاں جابز کی کمی ہو، وہاں جابز کی تلاش کرنا بھی ایک مشکل عمل ہے اور اسی عمل کو آسان بنانے کےلیئے بہت سے لوگ کام کر رہے ہیں اور ہر شخص کی یہی کوشش ہوتی ہے کہ پاکستان میں جابز کی تلاش کو آسان بنایا جائے تاکہ لوگوں کو کم وقت میں اُن کی من پسند جاب مل جایا کرے اور لوگوں کو زیادہ تکلیف اور مشکل کا سامنا نہ کرنا پڑے۔

ایک بہت مفید بات جس کا تذکرہ بہت ضروری ہے اور وہ یہ کہ جدید دور میں اگر کسی انسان نے کامیاب ہو نا ہے تو اُس کہ لیئے بڑے شہروں کا رُخ کرنا بہت ضروری ہے ۔ کراچی میں جابز، لاہور میں جابز اور اسلام آبا دمیں جابز کی تلاش قدرے آسان ہوجاتی ہے

۔ اس بات کا برملا اظہار بہت سے دانشوار اور اہل علم لوگ کر چکے ہیں ، کیونکہ بڑے شہر کا ماحول آپکی کی سوچ میں مثبت تبدیلی لاتا ہے اور آپکے کام کرنے کے انداز میں بھی پختگی آتی ہے ۔ اگر آپ موجودہ صورتحال میں بے روزگا ر ہیں تو آپکو یہی ایک مفید اور زندگی بدلنے والا مشورہ ہے کہ بڑے شہروں کا رُخ کریں ۔

پاکستان میں وفاقی حکومت کی ملازمتیں بھی آئے روز آتی رہتی ہیں ۔ ان ملازمتوں میں درخواست دینے کا سب سے بہترین طریقہ یہ ہے کہ آپ کو جب بھی اطلاع ملے کہ وفاقی حکومت کہ معتلقہ ادارے میں نوکری آئی ہے تو آپ اپنے تمام تر دستاویزات مکمل کرکے بھیج دیں ۔ یہ کام آپکی صلاحیت کو بھی بڑھائے اور آپکی نوکری کے امکانات بھی ورشن کر سکتا ہے ۔

ایک بات تو واضح ہے کہ کارونا وائرس کی وبا کہ اختتام کہ بعد پاکستان کہ معیشت کہ حالت بدلیں گے اور پاکستان میں مقامی، معاشرتی اور سرکاری سطح پر نوکریاں آیئں گی ۔ اس کی بنیادی وجہ یہ بھی کہ اس وبا کہ دوران پوری دنیا کو اربوں کا نقصان ہوا ہے اور بہت سے لوگوں کی زندگی کافی حد تک متاثر ہوئی ہے ۔ ہر مقام پر اور ہر سطح پر لوگوں کی یہی کوشش ہو گی کہ جیسے ہی ملک میں صحت کے مسائل ٹھیک ہوں تو وہ دوبارہ اپنے کاروبار کو کھڑا کرے تاکہ اُس شخص کہ ساتھ دوسرے لوگوں کا روزگار بھی چل سکے

۔ ایک اندازے کے مطابق کارونا کی وبا کہ اختتام کہ بعد پاکستانی سفارتخانے میں ملازمتیں بھی آیئے گی ۔ کیونکہ ہر دفتر کی یہی کوشش ہے کہ اپنے کام کو آگے لےکر جایا جائے اور نئ نسل کو موقع دیا جائے تاکہ ملک ترقی کر سکے۔

پاکستان میں نوکریوں کے لحاظ سے 2020 کا اختتام اور 2021 ایک مثبت سال ثابت ہونے کی امید کی جاسکتی ہے، کیونکہ کارونا کی وبا کہ بعد ملکی اور بین الا اقوامی ادارے یہی کوشش کریں گے کہ تما م تر چیزوں کو بہتر انداز میں لے کر جایا جائے تاکہ ملکی اور بین الا اقوامی معیشت ترقی کر سکے ۔ ساتھ ہی ہر شخص کو یہی ایک مفید مشورہ ہے کہ نوکری کی تلاش کو جاری رکھے کیونکہ کراچی میں جابز، لاہور میں جابز، اسلام آباد میں جابز اور کے پی کے میں جابز کی مواقع بہت زیادہ ہیں اور یہی بات آپکے ورشن مستقبل کی نوید ہو سکتی ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

You have successfully subscribed to the newsletter

There was an error while trying to send your request. Please try again.

We will notified you when new / latest job is published on our website? Enter your email address to be the first to know.